کورونا کے بعد ایک اور وبا پھوٹ پڑی،لیکن کس ملک میں ؟جانیے

بیجنگ (مانیٹرنگ ڈیسک)چین میں کورونا کی طرح کے ایک اور وبا پھوٹ پڑی جس نے سینکڑوں شہریوں کو اپنی لپیٹ میں لینا شروع کر دیا۔
عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق چین میں کورونا اور انفلوئنزا جیسی علامات والی بیماری تیزی سے پھیل رہی ہے جس پر حکومت نے ریڈ الرٹ جاری کرتے ہوئے اسکولوں اور اسپتالوں سے اعداد و شمار طلب کرلیے۔یہ مرض اتنی تیزی سے پھیل رہا ہے کہ عالمی ادارہ صحت نے بھی چینی حکومت سے ریکارڈ مانگ لیا جب کہ اقوام متحدہ نے بھی بیماری کے بارے میں معلومات فراہم کرنے پر زور دیا ہے۔یاد رہے کہ چین میں کورونا پابندیوں کے مکمل خاتمے کے بعد سے یہ پہلا موم سرما ہے۔ موسم سرما میں عمومی طور پر انفلوئنزا جیسے امراض پھوٹ پڑتے ہیں تاہم اس بیماری کے بارے میں تاحال کچھ معلوم نہیں ہوسکا۔البتہ ڈبلیو ایچ او نے چینی بچوں میں غیر تشخیص شدہ نمونیا کے کیسز میں اضافے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ڈیٹا مانگا ہے جب کہ اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ تاحال کوئی نئی بیماری سامنے نہیں آئی لیکن اسے جانچنے کی ضرورت ہے۔ادھر چین نے ڈبلیو ایچ او کو جواب دیا ہے کہ یہ کیسز رواں برس مئی سے کووڈ کی روک تھام کے ساتھ ساتھ مائکوپلاسما نمونیا جیسے معروف پیتھوجینز کی وجہ سے پھیل رہی ہے جو کہ ایک عام بیکٹیریل انفیکشن ہے اور زیادہ تر بچوں کو متاثر کرتا ہے۔چینی حکومت نے کہا کہ اس بیماری کے پھیلاو سے آگاہ ہیں اور عوام کو ہجوم والے مقامات اور اسپتالوں میں طویل انتظار کے وقت احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کا کہا ہے تاہم یہ کووڈ جیسی پابندیاں نہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں