آئی ایم ایف نے پیسے نہ دیئے تو۔۔۔شوکت ترین نے سنگین خدشے کا اظہار کر دیا

اسلام آباد(وقائع نگار خصوصی)پاکستان تحریک انصاف(پی ٹی آئی) کے مرکزی رہنما،معروف ماہر معیشت اور سابق وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ عالمی مالیاتی ادارے( آئی ایم ایف)کی شرائط پوری کرنے کیلئے منی بجٹ دیا جا رہا ہے،آئی ایم ایف نے پیسے نہ دیئے تو دوست ممالک بھی نہیں دیں گے۔
”پاکستان ٹائم “ کے مطابق سابق وزیر خزانہ شوکت ترین کا کہنا تھا کہ ہمارے پاس 3 بلین ڈالرز سے بھی کم کے ذخائر ہیں،آئی ایم ایف پروگرام کے بعد مہنگائی مزید بڑھے گی جبکہ بجٹ میں11 فیصد مہنگائی کا کہا گیا تھا لیکن مہنگائی27 فیصد تک پہنچ گئی ہے،ہمارے گردشی قرضے میں بھی مسلسل اضافہ ہورہا ہے،گیس،بجلی اورپٹرول کی قیمتیں بڑھانے پڑیں گی۔سابق وزیر خزانہ شوکت ترین ہمارا آئی ایم ایف سے پروگرام ستمبرمیں ختم ہونا تھا،ہم اپنا پیٹ اورجیب کاٹ کر قسط ادا کرتے تھے،ہماری حکومت روس سے سستا تیل خرید رہی تھی،پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ(پی ڈی ایم )والوں نے ہمارے دورمیں بہت واویلا مچایا،آدھا نقصان مفتاح اسماعیل اورآدھا اسحاق ڈار نے کیا، ڈالرمہنگا ہوتا ہے تو ہر چیز مہنگی ہوتی ہے،حکومت کا کہیں کوئی کنٹرول نہیں ہے،حکومت کوعوام پرآنے والے طوفان کی کوئی فکرنہیں ہے۔

معروف کالم نگار جاوید چوہدری کی جانب سے اپنے بارے لکھے گئے کالم پر رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے سابق وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ اگر سابق آرمی چیف جنرل(ر)قمر جاوید باجوہ نے میرے متعلق وہی گفتگو کی جو کالم نگار نے چھاپی ہے تو میں جواب دینا چاہوں گا،مجھے یقین نہیں کہ جنرل(ر) باجوہ نے ان خیالات کا اظہار کیا مگر پھر بھی ریکارڈ کی درستگی کیلئے کچھ حقائق عرض کرنا چاہتا ہوں،ریکوڈک ڈیل فائنل کی تو جنرل صاحب نے مجھے ہیرو قرار دیا،کالم نگار کے مطابق سابق آرمی چیف نے دعویٰ کیا کہ نیب کے 8 ارب کے مقدمے کے خاتمے میں جنرل( ر)فیض حمید نے میری مدد کی،یہ تاثر خلاف حقیقت اور مضحکہ خیر ہے،کسی مالی کرپشن کے الزام کے بغیر چار رینٹل پاورز کا معاملہ مجھ پر ڈالا گیا،میں نے رینٹل کمپنیوں کو اضافی سات فیصد ایڈوانس کی فراہمی کی منظوری دی،2019 میں وزیر اعظم عمران خان نے مجھے ذمے داری سونپنے کا کہا تو میں نے معذرت کی،میری معذرت کا سبب یہ تھا کہ میرے خلاف مقدمے تھے جن میں پچھلے سات سال سے کوئی کارروائی نہ ہوئی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں